بے روزگار نوجوانوں کے پریشان والدین

بے روزگار نوجوانوں کے پریشان والدین

بے روزگار نوجوانوں کے پریشان والدین

اظہر اقبال بٹ

نوجوان کسی بھی ملک کا سرمایہ  ہوتے ہیں۔ لیکن ایسا  اس وقت ممکن  ہوتا ہے جب ان کے لیے تعلیم و تربیت  کی مناسب  سہولیات  موجو د ہوں ۔ تا کہ وہ اپنا مستقبل سنوار یں   – اپنے ما ں باپ کی خدمت کر سکیں  اور ملک کی ترقّی  میں کردار ادا کر سکیں- تعلیم کے ساتھ ہنر بھی   ضروری ہے  اور ساتھ ہی کام کرنے کا جذبہ بھی ہونا چاہیے–

 ان عوامل کے بغیر نو جوان  ملک کا سرمایہ نہیں بلکہ  بے روزگاروں کا ہجوم ہوتے ہیں  اور ملک کا مستقبل نہیں بلکہ اپنے والدین ، خاندان اور ملک پر ایک بوجھ بن جاتے ہیں۔

کبھی  کسی  نے سوچا  ایسا  کیوں ہے؟  میں ان والدین کی نمائندگی کر رہا ہوں جن کے بچّے بےروزگار ہیں-اورا پنے تجربے اور مشاہدے کی بنیاد پر اپنی زندگی کا یہ پہلا  بلاگ لکھ رہا ہوں -۔ 

 

مقروض والدین تعلیم اور نوکری   

  ملک میں ہر سال بے روزگار نوجوانوں کی ایک بہت بڑی تعداد کا اضافہ ہو جاتا ہے ۔ ان میں بہت سے واجبی تعلیم والے ہوتے ہیں اور  بہت سے اعلیٰ تعلیم یافتہ بھی ہوتے ہیں- کیا  فایٔدہ  ایسی تعلیم کا جسے حاصل کرتے کرتےبچّوں کی   آدھی عمر گذر جاۓ اور والدین قرض لے لے کر فیسیں ادا کریں اور پھر نوکریوں کے لیے دربدر چکر لگانے کے با وجود کچھ حاصل نہ ہو۔  یہ نوجوان کاروبار بھی نہیں کر پاتے کیوں کہ  نہ تو  ان کے پاس تجربہ ہوتا ہے اور نہ ہی  ہم والدین کے پاس سرمایہ  ہوتاہے۔  

 

 

 ورکشاپ  میں ہنر سیکھنے والے نوجوان 

دوسری طرف کچھ لوگ  بچپن میں ہی اپنی  اولاد کو   ورکشاپس وغیرہ  میں کام سیکھنے کے لیے بھیج دیتے ہیں- یہ بچّے  نوجوانی تک آتے آتے آمدنی  گھر لانا شروع   کر دیتے ہیں  –  تا ہم  یہ ایک الگ المیہ ہے کہ ایسے  بہت سے بچّے  اپنا بچپن گنوا دیتے ہیں-  یہ  جنسی  ہراسانگی اور نشے  کا شکار ہو  جاتے ہیں اور  ان کی شخصیت کو نا قابِلِ  تلافی نقصان پہنچ چکا   ہوتا ہے ۔

  

ہنر سکھانے  والے تربیتی  پروگراموں کی ناکامی کی وجوہات

 فنی تعلیم کے فروغ کیلیے بار بار کوششیں کی گئیں – ملک میں فنی تعلیم کے  لیے ٹیوٹا اور نیوٹک  جیسے ادارے بھی قائم ہوۓ –  میٹرک میں کمپیوٹر کا مضمون بھی متعارف کرایا گیا ۔اس کے علاوہ بھی گزشتہ پنجاب اور مرکزی حکومتوں نے بہت سے  اقدامات کیے – نوجوانوں کو ۵۰۰ سے ۲۵۰۰   روپے  تک کے وظائف بھی دیے گئے- حکومت نے     نوجوانوں کووظیفہ دینے کے علاوہ  اس سے کئ گنا  ذیادہ    رقم  ٹیوٹا اور نیؤٹک جیسے اداروں کو دی۔ یہ رقم حاصل کرنے کے لیے  فنی تعلیم کے  بے شمار نجی  اداروں نے  ٹیوٹا  اور نیوٹک کے ساتھ  رجسٹریشن  کروالی  ۔ چھوٹے   چھوٹے  نجی    اداروں نے   گنجائش سے ذیادہ  کئی کئی  کورسز میں داخلوں  کے اشتہارات دیدیے

   ۔ نوجوانوں نے صرف وظیفہ حاصل کرنے کے چکر میں کئی کئی اداروں میں مختلف کورسز میں بیک وقت داخلے لیے۔  یوں بظاہر کورسز مکمل بھی ہوئے، سرٹیفیکیٹ بھی مل گئے، لیکن نہ ملی  تو  نوجوانوں کو نوکری نہ ملی –کیونکہ   فنی تعلیم کی کوالٹی پر کسی نے توجہ  ہی  نہ دی۔ نجی اداروں   کے پاس یہ کورسزز کروانے کے لیےنہ تو تربیت یافتہ  سٹاف تھا  اور نہ ہی سہولتیں۔  صرف حاضری لگائی جاتی  اور اگر کوئی کلاس ہوئ بھی  تو انٹرنیٹ سے نوٹس کاپی کر کے طلبہ کو دیے گئے۔

پریکٹیکل  جو  ہنر سیکھنے کیلیے بے انتہا  ضروری ہوتے ہیں  ان  کا تو کوئی تصور ہی نہیں تھا۔ نتیجہ یہ نکلا کہ بےشمار حکومتی سرمایہ  خرچ ہونے  کے باوجود طلبہ نہ تو  ہنر   سیکھ سکے  اور نہ ہی نوکری حاصل کر سکے۔

موجودہ حکومت اور روزگار

موجودہ حکومت کو چاہیے کہ گزشتہ حکومتوں کی ناکامی سے سبق سیکھتے ہوۓ   نوجوانوں کے روزگارکے فوری اور

 مؤثر پروگرام بناۓ ۔ وہ ماضی کی  غلطیاں نہ دہراۓ –  تعلیم کی اہمیت اور عظمت کو روزگار کی گارنٹی کے ذریعے

  – بحال کرے 

فنی تعلیم کے تمام ادارو ں کی کارگردگی ، سٹاف اور   پریکٹیکل  کی سہولیات کا ازسرنو جائزہ    لے کرغیر معیاری 

اداروں  کی رجسٹریشن  ختم کر دے – اور معیاری درسگاہوں سے تعلیم یافتہ ہنر مند نوجوانوں کو  پہلے اپرنٹس شپ اور پھر متعلقہ  اداروں میں نوکری فراہم کی جاۓ۔  

 

 

اظہر اقبال بٹ ملازمت پیشہ شخصیت  ہیں اور منڈی بہاؤدین  پنجاب سے تعلق رکھتے ہیں  

Pic Credit : ٖFeature Image – Degree: Pixabay on Pixels. Mechanic Pic: Adi Goldstein on Unsplash. Gentleman pic: Andrea Natali on Unsplash .

For Comments please write to crvoices@gmail.com. If you like the blog please forward its link to your contacts and share/tweet on facebook and twitter.

If you or any of your contacts wish to write for CRVOICES please send an email to crvoices@gmail.com. We encourage and guide to express your achievements, successes and challenges. However, the final decision to publish a blog rests solely with CRVOICES.

Read More
Let’s Bridge the Generation Gap

Let’s Bridge the Generation Gap

Let’s Bridge the Generation Gap 

Miss Iqra Khan

 

In my previous blog I wrote about generation gap and its causes by discussing technology revolution, influence of virtual world, false assumptions, communication gap etc. In this blog I suggest possible ways to bridge this gap between parents and children.

 

After a couple of rigid and harsh interactions like the one I described in the beginning of my previous blog (Generation gap and its causes ) the youth develops a feeling of being misunderstood or rather not understood at all. This would eventually lead towards loss of open communication as the youth would be reluctant to open up in front of parents.

As a protagonist of younger generation, I believe the elder generation needs to be more flexible and rational as they have an upper hand in the whole situation. They should reflect upon communication with children that ends up in anger with a deadlock. If your son or daughter is silent don’t consider it agreement try to probe with love and care to find out the details.

Listening, comprehending and then responding would actually improve the communication. Impulsiveness, false assumptions, rigid remarks and strictness only create strains in relationships.

Parents must recognize their children’s passion and give them an ear when they are willing to pursue anything. Parents should let their children’s creativity flourish and support them to chase their ideas. Parents should appreciate little things. Take pride in youth. Appreciate publicly, correct personally.

This is important because what may look like a fantasy to parents might be producing seismic vibrations of energy in your child’s mind. It is important for parents not to suffocate that energy of their children.

I do acknowledge the stress of parenting and handling young generation like ours. It’s not a piece of cake. Majority of elder generation is oblivious to much of the dynamics of 21st century.  However, spending quality time in light mood with children will help to develop comfort between both generations.

Youth must also respect their parents as the most sincere relationship in life. They should also appreciate parents’ efforts for their children. Youth should restrict over use of internet and gadgets and family should have regular meals together. Parents should discuss matters with their children and their opinion should be valued. This will increase maturity in youth.

 

Youth should limit overuse of internet and gadgets

It is important for parents and youth to understand challenges of both sides followed by making efforts to empathize each other’s perspective. The bridging of generation gap depends on the flexibility, patience and willingness to understand each other’s views and beliefs for a successful and complacent future.  

 

Miss Iqra Khan is a student of a medical university in Islamabad. 

For comments please write to crvoices@gmail.com

Picture credit: Featured image: Pixabay. Cell phone pic: Tracy Le Blanc

Read More
If I were Planet Earth I would be crying…

If I were Planet Earth I would be crying…

If I were Planet Earth I would be crying…

Ehsaan Khan – Student of grade 4

 

If I were planet earth I would be crying because men cut down trees and forests and also burn them. Therefore,  we have fewer trees and less greenery. I love trees because they give us fresh air, shade and stop big rocks from sliding.

If I were planet earth I would be crying because people throw plastic bottles, glass bottles and trash everywhere in streets, markets, oceans, lakes, river etc. This is not healthy for us, animals and for aquatic life.

 

 

If I were planet earth I would be crying due to burning of plastic bags. When we burn they release  dangerous smoke in the air making it unhealthy for our lungs, including of those who burn it. We must stop producing and using plastic bags. Already existing plastic bags should be recycled to make interesting and beautiful things.

 

 

Let us make a promise that:

  • We will not cut down trees.
  • We will not put trash and plastic bottles in streets, ,markets, oceans and lakes.
  • We will not produce and use plastic bags.
  • We will recycle existing plastic bags and will not not burn them. 
  • We will take care of our earth and our environment. 
  • We will fight against climate change.

 

Ehsaan is a grade 4 student with a school in Rawalpindi Pakistan.  This manuscript received first position in a creative writing competition at his school. 

Picture credits: a) Burning trees and globe by Pixabay, b) Bottles by Mali Maedar .

For comments please write to crvoices@gmail.com.

 

Read More
Generation gap and its causes

Generation gap and its causes

Generation gap and its causes

Miss Iqra Khan

 

“I am stressed out” said 14 years old Mira as she returned from school.

 “Why are you stressed out?” her mother asked promptly. 

 “Because I don’t think I am gona be as amazing as my friends”. Mira responded in a submissive tone.

“Oh please Mira don’t be stupid. You’re a grown up girl and we have provided you the best of everything.  We don’t expect this from you. Get ready for lunch.”

 

And this is how it goes on. The reason of such lack of understanding between parents and youth is generation gap. Generation gap is gap of an era. It counts differences in attitudes, beliefs, thinking and perceptions between two generations. 

The generation gap blocks the actual meaning and essence of words being delivered.  I think following are the major causes of generation gap:

  • Difference of priorities: I mean ultimate goals and milestones set by both generations, which they really look forward to. What parents want for their children is often different from children’s will. 
  • Increased consciousness of today’s youth: Youth is well aware of their surroundings and world in general. That’s why they tend to be more independent. Views of elders are thus, considered petty and old school by youngsters. Whereas, parents consider youth as stupid and immature for their choices.
  • Technology revolution: Everyone is aware about rapid technological advancement in this century. Youth live with this technology while most of the elder generation is oblivious to such developments. This is one of the major causes of generation gap.  
  • Influence of virtual world: Due to internet overuse youth begin to live in a virtual world, away from ground realities of the real world. This is one of the reasons that youth find it difficult to relate  with elders. This situation annoys our parents.
  • False assumptions: On the one hand parents find it difficult to convey their concerns while on the other hand youth finds it difficult to persuade parents. The situation leads to development of false assumptions. Unsettled assumptions enhance the generation gap.  
  • Comparisons/competition: This is an issue since long. Comparisons made with other children and youth create jealousy and competition causes loss of individuality. Lack of encouragement from elders further deepen the distances.
  • Independent mindset : As mentioned earlier, young generation really look for freedom and self-regulating lifestyle. Feeling of being controlled creates rage and aggression.
  • Lack of acceptance and appreciation: Youth complains about lack of appreciation by elders. When youth is appreciated by elders, it opens up their hearts and they feel encouraged. Psychologically proven, public appreciations boosts confidence and  renders differences.
  • Lack of communication: All the above mentioned reasons eventually create communication barriers between young and old generation. 

 

My next blog on www.crvoices.com will suggest how to address the generation gap. 

 

Miss Iqra Khan is a student of a medical university in Islamabad. 

For comments please write to crvoices@gmail.com

Picture credit: Pixabay

Read More
طاقتورلوگ اور قانون کی حکمرانی

طاقتورلوگ اور قانون کی حکمرانی

طاقتورلوگ اور قانون کی حکمرانی

  مس مہوش مجید

 

 بہت دن بعد دل چاہا کہ کچھ لکھا جاۓ ۔ درد کو لفظوں کی شکل میں ڈھال کے معاشرے کی بے حسی کا رونا رویا جاۓ  – میرے لکھنے سے نہ تو یہ دنیا بدلے گی اور نہ ہی کوئی انقلاب آۓ گا ۔ مگر میں پُراُمید ضرور ہوں کہ میری آواز کہیں نہ کہیں ضرور پہنچے گی –

 آج جو لکھ رہی ہوں وہ کوئی کہانی نہیں ہے ۔ کوئی افسانہ نہیں ہے- یہ ایک سچی رُوداد ہے جو میرے ہی جاننے والے کچھ لوگوں کے ساتھ  پیش آئ – یہ لکھتے ہوئے شدید دکھ ہورہا ہے کہ ظلم کرنے والے کوئی اور نہیں ہمارے محافظ ہی ہیں ۔ جی ہاں ہماری پولیس-

 بات کچھ یوں ہے کہ میرے شہر سے ملحقہ علاقے میں اراضی کے تنازع میں پولیس والوں نے چادر اور چار دیواری کے تقدّس کو پامال کرتے ہوئے گھر کی عورتوں کے ساتھ بدتمیزی کی- ایسے واقعات معاشرے میں عام ہیں- مگر لمحہ فکریہ  ہے کے اگر قانون کے رکھوالے ہی قانون توڑیں گے تو قانون لاگو کون کرے گا ؟

 بڑے زمینداروں جیسے طا قتورلوگ اپنے اثر کے بل بوتے پر قانون کو اپنی انگلیوں پہ نچاتے ہیں ۔ جبکہ ایک غریب شخص شُنوائی نہ ہونے کی وجہ سے اپنے ناکردہ گناہوں کی سزا بھگتنے پرمجبور ہوتا ہے۔ اگر ایسے ہی حالت رہے تو ہم لوگ پستی کی جانب ہی جائیں گے ۔

 میں جانتی ہوں یہ باتیں تلخ بھی ہیں اور یہ باتیں پرانی بھی ہیں ۔ لیکن اب ہمیں ایسے ٹھوس اقدامات ضرور کرنے چاہیں کہ قانون کی حکمرانی کا بول بالا ہو ورنہ ہمارے ملک میں انسانی جان سستی اور انصاف مزید مہنگا ہو جائے گا۔

  

  مس مہوش  مجید  پنجاب  میں ایک کسان گھرانے سے تعلق رکھتی ہیں اور شعبہ تعلیم و تدریس سے بھی وابستہ ہیں

For Comments please write to crvoices@gmail.com.

Read More
چھوٹے کسان کی محنت کا صلہ- 10 کلو چنے

چھوٹے کسان کی محنت کا صلہ- 10 کلو چنے

 عبدلمجید چھینہ ۔ضلع لیّہ پنجاب

میں آج چھوٹے کسان کی بات کروں گا ۔اس کے نقصان کی بات کروں گا- اس  کی محرومی کی بات کروں گا۔ کیوںکہ  اگر چھوٹے کسان کی حالت پر نظر ڈالی جاۓ تو اس وقت معاشرے کا  سب سے مجبور طبقہ یہ چھوٹا کسان ہی ہے ۔ اور موسمیاتی تبدیلی نے اسکی کمر مزید توڑ دی ہے

 میں اگرخود اپنی بات کروں تو ہر سال چنے کے تقریبا” 400 کلو بیج بیجائ کرتا تھا گزشتہ سال مارچ  سے اکتوبر تک بارشیں نہ ھونے کی وجہ سے ضلع لیّہ  کے ِگِرد و نواح میں خشک سالی کا مسٔلہ درپیش تھاایسی صورتِ حال میں زمین میں نمی نہ ہونے کے سبب چنے کی بیجائ مشکل تھیپھر بھی میں نے رِسک لیا اور 100 کلو بیج بویا  کُل خرچ 15000 روپے تھااُمیّد تھی کہ اگر بارش ہوئ تو کچھ فصل ھو جاۓ گی

اگر بارش وقت پہ ہو جاتی توچنے کی  تقریبا” 62 من پیداوار حاصل ہوتی –لیکن بارش نہ ہوئ اور  خشک سالی کی وجہ سےصرف 4 من (یعنی 162کلو)  پیداوار ہوئ -جس میں سے فصل کٹائ کی مزدوری   1من دے دی-  آڑھتی صاحبان نے 12کلو حصّہ لے لیا-  اس کے بعد 110 کلو چنے بچے- لیکن  100 کلو چنا  تو میں نے بیج استعمال کیا تھا۔ جو تفریق کرنے کے بعد معلوم ہے مجھ جیسے چھوٹے کسان کو کیا حاصل ہوا؟

 جی ہاں  صرف 10 کلو چنے حاصل ہوۓ- صبح شام دن رات محنت کے بعد یہ ہے ایک چھوٹے کسان کی کمائی- وہ کسان جو تمام ملک کیلیے خوراک پیدا کرتا ہے خود نقصان کا شکار ہے- محرومی کا شکار ہے-  

اس سے آگے اب  کیا لکھوں-کو ئی سننے والا ہے – کوئی پڑھنے والا ہے؟  میرے مسئلے پر کوئی دھیان دینے والا ہے؟ 

اپنی راۓ اور   کمنتس کے لیے لکھیں- crvoices@gmail.com

Read More
گندم کی سرکاری خریداری اور چھوٹے کسانوں کے مسا ئل  –  حصہ دوئم

گندم کی سرکاری خریداری اور چھوٹے کسانوں کے مسا ئل  –  حصہ دوئم

تحریرـ طارق محمود ایڈوکیٹ- صدر سویرا فاُٰونڈیشن- چشتیاں ضلع  بہاولنگر  پنجاب

پہلے حصّے میں میں نے  چھو ٹے کسانوں کی نئ  حکومت  سے  امیدیں، کسانوں کے  بڑھتے  اخراجات، بار دانہ کا حصول  اور خسرہ گرداوری، اور 2019 کی گندم  خریداری پالیسی میں فرق کے بارے میں تفصیل سے لکھا تھا۔ جو کے     20 اپریل 2019 کو شائع ہوا – یہ دوسرا حصّہ گندم خریداری وقت پر شروع نہ  ہونے کا نقصان، با ردانہ کے حصول  میں مشکلات، کرپشن کے مسائل ، خریداری مراکز میں مسائل، ادایٔگی  کی مشکلات  اور ان تمام  مسائل   حل کرنے کیلیے تجاویز پر مشتمل ہے۔  

  گندم خریداری وقت پر شروع نہ  ہونے کا نقصان

  چھوٹے کسانوں کے لیئےایک تکلیف دہ پہلو یہ بھی  ہےکہ ہر سال حکومت پندرہ اپریل سے گندم کی سرکاری خریداری کرنے کا اعلان کرتی ہےاوراس کے لیے انتظامات اپریل کے اغاز میں شروع کرتی ہے۔  لیکن باردانہ کی تقسیم میں تاخیر کرتے کرتے خریداری کا عملی آغاز 29،28اپریل سے ہوتاہےاور گندم کی قیمت کی ادائیگی کا عمل 2 مئی سے شروع ہوتا ہے۔  جبکہ دوسری طرف اپریل کے پہلے  ہفتے سے پنجاب میں گندم کی کٹائی کا عمل شروع ہوجاتا ہے۔ چھوٹے کسانوں نے چونکہ اپنی فصل کی کٹائی اور گہائی خود کر نا ہوتی ہے۔ اس لیئے وہ جلد سے جلد اس عمل کو مکمل کر لیتے ہیں۔  حکومتی مراکز پر ابھی تک خریداری کا عمل شروع نہیں ہوا ہوتا اس لیے کسان مجبو ر ہوتا ہےکہ وہ اپنی گندم کی پیداوار کھیتوں سے سیدھا منڈیوں میں لے جائےیا کھیتوں میں ہی بیوپاریوں کوکم قیمت پر فروخت کردے۔

با ردانہ کے حصول  میں مشکلات  

چھوٹے کسانوں کے لئے مزید مشکلات باردانہ کے حصول کے طریقہ کار اورخرید اری مراکز پرگندم کی فراہمی کے بعد اس کی قیمت وصول کرنےکے طریقہ کار نے پیدا کردی ہیں۔ باردانہ کے حصول کے لئے سب سے پہلے تو کسانوں کو کسی بنک سے بوریوں کی قیمت کے مطابق اس مالیت کا بنک ڈرافٹ /پے آرڈر بنوانا پڑتا ہے جس کے ساتھ اپنی خسرہ گرداوری کی نقل اور شناختی کارڈ کی کاپی کے ساتھ درخواست خریداری مرکز پر جمع کروانا پڑتی ہے ۔

کرپشن کے مسا ئل   

 خسرہ گرداوری کے لئے پٹواریوں کی جیب گرم کرنا پڑتی ہے۔ بنک ڈرافٹ بنوانا ایک الگ دشوار مرحلہ ہے جسے طے کرنے میں کسان کے 2سے 3 دن لگ جاتے ہیں۔ فائل جمع ہونے کے بعد اسے لمبی لمبی لائنوں میں لگ کر باردانہ حاصل کرنا پڑتا ہے اور خریداری مراکز کے عملہ کی” خدمت” کئے بغیر یہ مرحلہ طے کرنے والے کسانوں کا شمار خوش قسمت لوگوں میں ہوتا ہے۔

خریداری مراکز میں مسائل 

خداخدا کرکے یہ سارے مراحل طے ہو بھی جائیں اور کسان گندم لے کر خریداری مرکز پہنچ جائے تو ایک بار پھر لمبی لمبی لائنوں میں لگنا پڑتا ہے۔ چھوٹے کسانوں کے پاس اپنا ٹریکٹر ٹرالی تو ہوتا نہیں ہے وہ عام طور پر کرائے پر حاصل کرکے اپنی گندم لے جاتے ہیں۔ وہاں جب 2 ،2 دن تک کھڑا ہونا پڑتا ہے تو اسے ٹریکٹر ٹرالی والے کو فی دن کے حساب سے کرایہ ادا کرنا پڑتا ہے ۔ یہ مرحلہ بھی طے ہو جائے اور ٹرالی خریداری مرکز کے اندر پہنچ جائے تو پھر خریداری مرکز کے عملہ کی مرضی ہے کہ وہ اس کسان کو یہ کہہ کر کہ اس کی گندم کی کوالٹی ٹھیک نہیں ہے اس لئے اسےکاٹ لگے گی (یعنی کٹوتی ھو گی )  اور اس کاٹ کے نام پر وہ جتنی بوریاں چاہے رکھ لے۔   گندم کی یہ اضافی بوریاں خریداری مراکز کے عملہ کی ذاتی جیب میں جاتی ہے  اورکسان بےچارہ مجبورا”  یہ سب کچھ برداشت کرتا رہتا ہے۔

ادایٔگی  کی مشکلات  

جب کسان کو اس  کی گندم کی قیمت ادا کی جاتی ہے تو وہ بھی بذریعہ بنک ادا کی جاتی ہے۔ حکومتی پابندیوں نے بینکوں میں اکاؤنٹ کھولنا  انتہائی مشکل کردیا ہے۔ جس کی وجہ سے بہت سارے کسان ان تمام مراحل کو طے کرنا ناممکن سمجھتے ہوئے خریداری مراکز پر گندم فروخت کرنے کی بجائے کھلی منڈی میں یا بیوپاریوں کو فروخت کر دینا مناسب سمجھتے ہیں اور کسانوں کی اس مجبوری سے فائدہ اٹھاتے ہوئے خریداری مراکز کے عملہ کے منظور نظر بیوپاری کسانوں سےبہت کم نرخوں پر گندم خریدلیتے ہیں۔ اور اس طرح سے چھوٹے کسانوں کا استحصال کرتے ہیں۔

 مسا ئل   حل کرنے کیلیے تجاویز

گندم کی خریداری کا آغاز یکم اپریل سے شروع کیا جائے اور گندم کے باردانہ کی فراہمی کا عمل مارچ کےمہینہ میں مکمل کرلیا جائے تاکہ جیسے ہی گندم کی خریداری کا آغاز یکم اپریل سے شروع کیا جائے اور گندم کے باردانہ کی فراہمی کا عمل مارچ کےمہینہ میں مکمل کرلیا جائے تاکہ جب کسان اپنی گندم کاٹے سیدھا کھیت سے خریداری مرکز تک پہنچادے

۔پانچ ایکڑ تک کے گندم کے کاشتکار سے باردانہ کی پابندی ختم کی جائے اور وہ اپنی کھلی گندم خریداری مرکز تک پہنچا سکے جہاں پر مرکز خریداری  کا عملہ خود اس کی گندم کی باردانہ میں بھرائی کروالے۔

بوریوں کی تعداد مقرر کرکے باردانہ کی تقسیم کو اوپن کردیا جائے۔ خاص طور پر غلہ منڈیوں کے آڑھتیوں کو باردانہ فراہم کیاجائے تاکہ غلہ منڈیوں میں مسابقتی عمل کی وجہ سے کھلی منڈیوں میں گندم کی قیمت بہتر ہو سکے ۔ جب سے آڑھتیوں کو اس عمل سے باہر کیا گیا ہے تب سے کسانوں کا استحصال شروع ہوگیا ہے ۔ بیوپاری دو سو سے ڈھائی سو روپے من تک منافع کما رہے ہیں جبکہ آڑھتی 5 سے 10 روپے بوری کے منافع پر بھی گندم خریداری مراکز پر فروخت کرتے رہےہیں۔ جس کی وجہ سے کسانوں کو کھلی منڈی میں بھی حکومت کی امدادی قیمت سے 10 ،20 روپے من کم قیمت مل جاتی تھی۔ مگر وہ پہلے بیان کی گئی تمام تکالیف سے بچ جاتا تھا اور اس بات پر وہ بہت خوش تھا کیونکہ اس سے اس کا بہت سارا وقت اور پٹواری ،  بنک اور خریداری مراکز کے چکروں سے بچ جاتا تھا۔

کسانوں کو اس کی گندم کی قیمت ادائیگی کا کوئی ایسا طریقہ بنایا جائے جس سے اس کو بنک میں اپنا اکاؤنٹ کھولنے کے بغیر ہی  نقد ادائیگی ہوجائے۔

بنک کے ذریعہ سے پے منٹ پر کسان جب بنک سے رقم نکلواتا ہے تو بنک اس پر نان فائلر ہونے کی وجہ سے 0.6 فیصد ودہولڈنگ ٹیکس کاٹ لیتا ہے جو کہ اس پر ایک اضافی بوجھ ہے۔ گندم کی ادائیگی پر ودہولڈنگ ٹیکس کی کٹوتی منسوخ کی جائے-

خریداری مراکز اور تحصیل وضلع کی سطح پر خریداری مراکز کی نگرانی کے لئے بنائی گئی کمیٹیوں کی تشکیل میں سیاسی عمل دخل ختم کیا جائے اور اس عمل کی نگرانی یونین کونسلوں اور کسانوں کے نمائندوں کو دی جائے۔

Read More
1 گندم کی سرکاری خریداری اور چھوٹے کسانوں کے مسا ئل ۔ حصہ

1 گندم کی سرکاری خریداری اور چھوٹے کسانوں کے مسا ئل ۔ حصہ

 تحریرـ طارق محمود ایڈوکیٹ- صدر سویرا فاُٰونڈیشن- چشتیاں ضلع  بہاولنگر  پنجاب

چھو ٹے کسانوں کی امیدیں

پاکستان میں پی ٹی آئی کی حکومت کے برسراقتدارآتے ہی عوام نے توقعات وابستہ کرلی تھیں کہ اب تبدیلی کی لہران  کے دروازوں پر بھی دستک دے گی –  چھوٹے  کسانوں کے دلوں میں بھی یہ امنگ جاگ اٹھی تھی کہ اب  خو شحالی  ان کے گھروں میں بھی ڈیرے ڈالے گی –  ان کسانوں کو بھی اپنے حالات میں تبدیلی دیکھنے کو ملے گی۔ مگر جیساکہ کسی شاعر نے کہا ہے کہ:؂

 خواب ہوتے ہیں دیکھنے کے لیئے

ان میں جاکر مگر   رہا نہ کرو 

پاکستان با لخصوص پنجاب میں  گندم کے کاشتکار یہ توقع کررہےتھےکہ  اس سال  سرکاری خریداری کی پالیسی میں   گزشتہ حکومتوں کے  ادوار  کی   تکالیف کا ازالہ کیا جاۓ گا اور انہیں خصوصی مراعات فراہم کی جائیں گی – کسان گندم کی فصل آسانی کے ساتھ حکومتی خریداری مراکز تک پہنچا کر حکومت کی مقرر کردہ امدادی قیمت حاصل کر سکیں گے۔مگر  کسانوں کی یہ امیدبرنہیں آئی اوراس سال کی  گندم  خریداری پالیسی بھی سابقہ حکومتوں کی پالیسیوں کا تسلسل ہی ہے۔

کسانوں کے  بڑھتے  اخراجات

کسانوں کے  بڑھتے  اخراجات میں گزشتہ  ایک سال کے دوران ڈالر کی اونچی   اڑان  کی وجہ سے زرعی مداخلات کی قیمتوں میں کئی گنااضافہ ہوچکاہے۔جس کی وجہ سے  فی ایکڑ پیداواری لاگت میں  کئی گنا اضافہ   ہوچکا  ہے – ان حالات میں کسانوں کا خیال تھاکہ حکومت  گندم کی امدادی قیمت میں مناسب اضافہ کرےگی مگر ایسانہ ہوسکا  – اس سال بھی گندم کی امدادی قیمت 1300روپےفی من ہے۔ خیال رہےکہ1300روپے امدادی قیمت آج سےکئی سال پہلے مقرر کی گئی تھی  – تب سے اب تک زرعی مداخلات کی قیمتوں میں 3سے4گنااضافہ ہوچکاہے۔ ایسے حالات میں  کسان اپنے پیداواری اخراجات ہی بمشکل پورےکرپاتاہے۔منافع تو اس کے لئے خواب و خیال  کی بات ہے۔

اب اگرحقائق کی طرف آئیں تو   1300 روپے فی من  امدادی قیمت حاصل کرنے والے خوش نصیب بھی   بااثر بڑے زمیندار،جاگیرداریا سیاسی طور پر بااثر لوگ ہوتے ہیں۔چھوٹے کسان اس سہولت سے عام طور پر محروم ہی رہتےہیں۔

بار دانہ کا حصول  اور خسرہ گرداوری

پاکستان میں چھوٹے کسانوں کی  بڑی تعداد یاتوزمین کےمالک نہیں ہیں یا صرف ایک دوایکڑ کےمالک ہیں  –  اپنی زمین کے ساتھ ساتھ وہ یا توچند ایکڑ زمین مستاجری(ٹھیکہ/لیز) پرلے کر کاشت کرتے ہیں یا بطورمزارع کسی دوسرے  زمیندار کی زمین کاشت کرتے ہیں۔ ایسے کاشتکاروں کالینڈ ریونیوریکارڈ میں کہیں اندارج نہیں ہوتا – ریونیوریکارڈ میں ایک رجسٹر ہوتا ہے جسے خسرہ گرداوری رجسٹرکہا جاتا ہے ۔خسرہ گرداوری رجسٹر اس بات کا ریکارڈ رکھتا ہےکہ کسی قطعہ زمین پر اس وقت قابض کون ہے؟یعنی ایک کھیت کا مالک اگر زید ہےتواس کھیت کی ملکیت توزید کی ہی ہوگی مگراگرزید نے کھیت کسی بکر کو ٹھیکے پردیاہواہےیابکرکومزارع رکھا ہواہےتوخسرہ گرداری میں بکر کا نام درج ہونا چاہیے۔مگر زمین کے مالکان بوجوہ  ایسا نہیں ہونے دیتے اورخسرہ گرداوری میں بھی اپنے نام کا اندراج ہی کرواتے ہیں۔

  گندم کی سرکاری خریداری پالیسی میں حکومت باردانہ ان کاشت کاروں کو فراہم کرتی ہے جن کا نام خسرہ گرداوری ریکارڈ میں شامل ہے۔اس پالیسی کی وجہ سے چھوٹے کسانوں، مزارعوں اور مستاجروں کی بہت  بڑی تعداد سرکاری امدادی قیمت پر اپنی گندم فروخت کرنے سے محروم رہ جاتی ہے اوریہ باردانہ بڑے زمیندار اپنے نام پر حاصل کر کے یا تو خودان چھوٹے کسانوں سے اونے پونے داموں گندم خرید کر حکومتی خریداری مراکز پر فروخت کر دیتے ہیں یا یہ باردانہ اپنے نام پر حاصل کر کے بیوپاریوں کو فروخت کر دیتے ہیں۔ اور یہ بیوپاری  اپنی مرضی کے نرخوں پر انہی چھوٹے کسانوں سے گندم خریدکرمنافع کماتے ہیں۔

 

 اس سال  گندم خریداری کی پالیسی میں کچھ ایسا نہیں ہےجوکہ پچھلے سالوں کی پالیسیوں سے مختلف ہو سوائے اس کے کہ اس بار کسانوں کو 8بوری فی ایکڑ کی بجائے 9بوری فی ایکڑ باردانہ جاری کیاجائےگااور کسانوں کو خریداری مراکز پر گندم پہنچانے کے کرایہ کی مد میں صرف چندروپے فی بوری اضافہ کر دیا گیا ہےاور اس بار کسان کو 9 روپے فی بوری کرایہ کی مد میں ادا کیا  جائے گا۔  تا ہم   یہ  پابندی بھی ہے کہ کسی بھی کسان کو   10 ایکڑسے زیادہ گندم کے لیئے باردانہ فراہم نہیں کیاجائےگا – اس سال بروقت بارشیں ہونے کی وجہ سے  امید کی جاتی ہےکہ فی ایکڑپیداوار 40من فی ایکڑ  تک  کی امید تھی – حالیہ بارشوں سے گندم کا بہت نقصان ہوا ہے جس پہ میں الگ بلاگ لکھوں گا-  بہرحال  40من فی ایکڑکے حساب سے  9بوری فی ایکڑ  باردانہ فراہم کرنے کا مطلب ہے کہ کسان فی ایکڑ صرف ساڑھے بائیس من گندم حکومت کی امدادی قیمت پر فروخت کر سکے گااور باقی 

ماندہ گندم اسے کھلی مارکیٹ میں کم قیمت یعنی نقصان پر فروخت کرناہوگی ۔

Pictures credit. Archie Binamaria, Ms Fatima  Tariq, Tariq Mehmood. Picture editing: Ms Diya.

For comments please write to crvoices@gmail.com

Read More
What can Pakistan learn from Malaysia? Part 2

What can Pakistan learn from Malaysia? Part 2

Dr Atiq ur Rehman

 

Prime Minister of Malaysia Tun Mahathir bin Mohamad visited Pakistan March 21-23, 2019 at the invitation of Prime Minister Imran Khan. Dr Mahathir was the Guest of Honour at the Pakistan Day Parade on 23 March. 

Part 1 of the blog was published (www.crvoices.com) on March 21 focusing on what Pakistan could learn  from Malaysia on political stability and consistent policies, law and order, competition among states, independence of institutions, automation and integration of government systems and processes, deregulation of economy, free flow of capital, and integration with regional economies.

Part 2 is focusing on what Pakistan could learn on women economic empowerment, technology and innovation, commercial centres, tourism, and coexistence. 

  • Women Empowerment: Women are socially and economically empowered in Malaysia. More than 90% women are literate. They are very active contributors to the economy. In 2017 female  labor force participation in Malaysia was 50.79% against just 24.93% in Pakistan. About 17% of the business organizations in Malaysia have women CEOs. Now the government is pursuing the goal to increase the share of women in the board of directors of companies to 30%.
  • Technology and innovation:  Malaysia is among the 35 leading countries in the world on account of Global Innovation Index. On Digital Evolution Index (2017), it secured a place at 26th position. Malaysia has made unprecedented advancement in artificial technology, Internet of Things (IOT), fintech, machine learning, and blockchain. The country has established several institutions to implement and monitor policies of the government to accelerate the process of technological transformation. The leading institution is the Malaysia Digital Economy Corporation (MDEC), established by government way back in 1996. It had envisioned Malaysia to become a developed country by 2020. It is transforming Malaysia into a digital economy by attracting investors, globalising local tech champions, catalysing industry-driven digital ecosystem, building critical enablers of the digital economy and driving inclusive adoption of technology in all sectors of the economy. The country is fast becoming a paper-cashless economy.
  • Besides, the government has established a new city to enhance IT development. The city ‘Cyberjaya’ hosts world leading IT companies including IBM and HP. Cyberjaya aspires to be known as Silicon Valley of Malaysia.
  • Commercial centres: The state governments have enabled the private sector to establish big commercial centres in almost every part of the country. Production and trade units are facing increasingly tougher competition. This strategy keeps screening out relatively lesser efficient entities. Hence, everyone has to fight hard to make a place and grow.
  • Tourism : Every state in Malaysia has developed numerous spots to attract tourists. In 2017, Malaysia received 25.95 million foreign tourists – equivalent to 82% population of the country. The country earned RM82.2 billion (more than US$ 20 billion) in tourism receipts. This figure is almost equivalent to total annual export earnings of Pakistan. In 2018, the number of foreign tourists was expected to cross the mark of 33 million.  Pakistan has more avenues for foreign tourists – mountainous tourists, desert tourists, aquatic tourists, religious tourists – and what not? So what are we waiting for?
  • Coexistence: Malaysia has emerged as a multi-cultural society. Malays and other indigenous people are 58% of the population, Chinese are 24%, Tamils are 8% and others are 10%. The nation has gained tremendous ability to co-exist. No one is judged based on colour, creed, religion, sect, language or nationality. There is zero tolerance for hate speeches. Religious sermons are issued by the government. In many places you will find worship places of different religions located close to each other. Followers of each religion have learned how to respect others. In this way, diversity has become their core value.  

Concluding remarks : Pakistan can learn from the experience of Malaysia in all of the above ways. I am confident that if we adapt similar strategies, Pakistan can rapidly climb the ladder of social cohesion, economic growth and development. 

 

Dr Atiq ur Rehman is a Pakistani living in Malaysia. He  has been working as Chief Operating Officer with an IT company in Kuala Lumpur . 

Read More
What can Pakistan learn from Malaysia? – Part 1

What can Pakistan learn from Malaysia? – Part 1

Dr Atiq ur Rehman

Prime Minister of Malaysia Tun Mahathir bin Mohamad popularly known as Dr Mahathir Muhammad is visiting Pakistan March 21-23, 2019 at the invitation of Prime Minister Imran Khan. Dr Mahathir would be the Guest of Honour at the Pakistan Day Parade on 23 March.

Pakistan can learn plenty of things from Malaysia in the domains of cultural diversity, economic growth, trade, food and water security and women empowerment. Key learnings are presented below:

Business and Economic Growth

Malaysian economy has grown very rapidly. In 2017 per capita income reached US$ 28,650, on purchasing power parity basis. Export earnings of Malaysia reached US$ 188 billion – 9 times higher than the export earnings of Pakistan. How could Malaysia achieve this miraculous growth? Major strategies taken by the Malaysian Government to promote business and economic growth are:

  • Political stability and consistent policies: Democratically elected governments are allowed to freely make and implement policies. All former governments completed their terms: Tunku Abdur Rahman (1957-70), Abdur Razak Hussein (1970-76), Hussein Onn (1976-81), Mahathir Mohamad (1981-2003), Abdullah Ahmad Badawai (2003-2008), Najib Razak (2009-2018). Political stability has ensured consistency of the government policies and built trust of the business community in the government.
  • Law and order: Police is very active in maintaining law and order. There are several law enforcement agencies which operate under the umbrella of Royal Malaysia Police, to maintain law and order. It is not possible for anyone to escape the grip of the law – who so ever the person may be. It gives confidence to the business community to invest and run their businesses.
  • A large number of foreign citizens live in Malaysia, primarily because they feel very safe there. They don’t come alone. They bring financial capital. Malaysian government launched second home Malaysia My Second Home (MM2H) scheme. Under this scheme you (along with your family) can get residential visa for a period of 10 years. It is renewable after every 10 years. You only need to deposit a certain fixed amount in a bank in Malaysia (RM 150,000 for age above 50 and RM 300,000 for person below age 50) to become eligible for the scheme.
  • Competition among states: There are 13 states in Malaysia. Every state is run by an elected government. The states compete with each other in growing their economies, attracting local and foreign investment, foreign students for studying in local universities, and foreign tourists.
  • Independence of institutions: Four key pillars of the state run parallel without interfering in each other domains. These pillars include: 1) the king/sultan of the federation (the Yang di-Pertuan Agong) and the kings/sultans of the states; 2) parliament; 3) government; and 4) judicial system. Shariah courts are also there which function in parallel to the main judicial system. However, shariah courts entertain only those cases which are relevant to muslims. It is also interesting to note that the judges don’t come to the media/public to ensure impartiality in the delivery of justice.
  • Automation and integration of government systems and processes: Almost all business processes of the government are fully automated and integrated. Technology has made taxation system very transparent, efficient and effective. It does not allow anyone to avoid tax liabilities. No one is exempted. On the other hand, in Pakistan many mighty segments of the society enjoy exemptions.
  • Deregulation of economy: Businesses are run predominantly by the private sector. Private sector enjoys freedom to function to the fullest of its potential. Even the state governments have delegated many of their functions to the private sector entities for more efficient service delivery. This strategy has succeeded in achieving higher level of efficiency, agility and innovations. It is very easy to launch any new business. On the index of Ease of Doing Business, Malaysia is placed among leading 15 countries.
  • Free flow of capital: There are least restrictions on the movement of financial capital into and out of Malaysia. Besides, foreigners are allowed to freely enter and invest in many sectors of the economy. Eventually, foreign investment keeps flowing into the country. Foreign investment does not come alone. It brings new ideas, more sophisticated and innovative technology and high quality human capital. It eventually keeps adding substantial value to the Malaysian economy on sustainable basis.
  • Integration with regional economies: Malaysia is an active member of the Association of South East Asian Countries (ASEAN). The ASEAN community is gradually progressing towards a model of European Union, in line with the ASEAN Community Vision 2025. Many restrictions on the movement of financial and human capital have already been removed. ……..END of PART 1

Dr Atiq ur Rehman is a Pakistani living in Malaysia. He  has been working as Chief Operating Officer with an IT company in Kuala Lumpur . 

Read More